سارے منظر فسوں تماشا ہیں

بشر نواز

سارے منظر فسوں تماشا ہیں

بشر نواز

MORE BYبشر نواز

    سارے منظر فسوں تماشا ہیں

    کل گھٹائیں تھیں آج دریا ہیں

    کوئی یادوں سے جوڑ لے ہم کو

    ہم بھی اک ٹوٹتا سا رشتہ ہیں

    ناؤ جیسے بھنور میں چکرائے

    اب بھی آنکھوں میں خواب زندہ ہیں

    بے تحاشہ ہواؤں سے پوچھیں

    راستے کس سفر کا نوحہ ہیں

    دھند اوڑھے نگاہیں کیسی ہیں

    سانس لیتے ہوئے کھنڈر کیا ہیں

    مآخذ :
    • کتاب : Range-e-Gazal (Pg. 505)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY