ساتھ غیروں کے ہے سدا غٹ پٹ

ولی اللہ محب

ساتھ غیروں کے ہے سدا غٹ پٹ

ولی اللہ محب

MORE BYولی اللہ محب

    ساتھ غیروں کے ہے سدا غٹ پٹ

    اک ہمیں سے رکھے ہے دل میں کپٹ

    چنگل‌ باز ہیں تری مژگاں

    طائر دل کو پل میں لے ہے جھپٹ

    تیری اس وضع‌ دل ربائی سے

    گھر کے گھر ہو گئے ہیں چوڑ چپٹ

    وہ بھی دن پھر دکھائے گا اللہ

    رات کو سوئے تو گلے سے لپٹ

    پاس جب غیر کو بٹھاتا ہے

    جائے ہے دل ترے ملاپ سے ہٹ

    دیتے ہو بات بات میں بازی

    ایک ہو اپنے کام کے نٹ کھٹ

    ناز کی تیغ غیر پر مت کھینچ

    دل ہمارا کہیں نہ جاوے کٹ

    جس طرح چاند پر ہو ابر سیاہ

    زلف یوں مکھڑے پر رہی ہے الٹ

    عید ہے آج آ گلے مل لیں

    دشمنوں کی تو جائے چھاتی پھٹ

    غم میں تیرے ہیں اشک یوں جاری

    ہر گھڑی جس طرح چلے ہے رہٹ

    عشق وہ گھر ہے جس کے شاہ و گدا

    با ادب چومتے رہے چوکھٹ

    کل شیََٔ محیط کی تقریر

    کھٹ سے انسان کے ہوئے پرگھٹ

    دل بیچارہ اک تن تنہا

    فوج غم آئے ہے تمام سمٹ

    دوست کی ہو مدد تو یک دم میں

    جائے یہ معرکہ تمام پلٹ

    یاں قدم راہ پر سوائے نہ رکھ

    اے محبؔ راہ عشق کی ہے بکٹ

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY