ساز فرقت پہ غزل گاؤ کہ کچھ رات کٹے

رئیس اختر

ساز فرقت پہ غزل گاؤ کہ کچھ رات کٹے

رئیس اختر

MORE BY رئیس اختر

    ساز فرقت پہ غزل گاؤ کہ کچھ رات کٹے

    پیار کی رسم کو چمکاؤ کہ کچھ رات کٹے

    جب یہ طے ہے کہ غم عشق بہت کافی ہے

    غم کا مفہوم ہی سمجھاؤ کہ کچھ رات کٹے

    صبح کے ساتھ ہی ہم خود بھی بکھر جائیں گے

    دو گھڑی اور ٹھہر جاؤ کہ کچھ رات کٹے

    دامن درد پہ بکھرے ہوئے آنسو کی طرح

    میری پلکوں پہ بھی لہراؤ کہ کچھ رات کٹے

    ذکر گلزار سہی قصۂ دل دار سہی

    زخم کے پھول ہی مہکاؤ کہ کچھ رات کٹے

    ایک ایک درد کے سینہ میں اتر کر دیکھو

    ایک ایک سانس میں لہراؤ کہ کچھ رات کٹے

    دل کی وادی میں ہے تاریک گھٹاؤں کا ہجوم

    چاندنی بن کے نکھر جاؤ کہ کچھ رات کٹے

    قاتل شہر سے بچ کر میں ابھی آیا ہوں

    میں اکیلا ہوں چلے آؤ کہ کچھ رات کٹے

    فرش کرنوں کا بچھا دے گی سحر آ کے رئیسؔ

    دل کے زخموں کو بھی چمکاؤ کہ کچھ رات کٹے

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY