سب بدلتے جا رہے ہیں سر بسر اپنی جگہ

جمال احسانی

سب بدلتے جا رہے ہیں سر بسر اپنی جگہ

جمال احسانی

MORE BY جمال احسانی

    سب بدلتے جا رہے ہیں سر بسر اپنی جگہ

    دشت اب اپنی جگہ باقی نہ گھر اپنی جگہ

    میں بھی نادم ہوں کہ سب کے ساتھ چل سکتا نہیں

    اور شرمندہ ہیں میرے ہم سفر اپنی جگہ

    کیوں سمٹتی جا رہی ہیں خود بہ خود آبادیاں

    چھوڑتے کیوں جا رہے ہیں بام و در اپنی جگہ

    جو کچھ ان آنکھوں نے دیکھا ہے میں اس کا کیا کروں

    شہر میں پھیلی ہوئی جھوٹی خبر اپنی جگہ

    میں جمالؔ اپنی جگہ سے اس لیے ہٹتا نہیں

    وہ گھڑی آ جائے شاید لوٹ کر اپنی جگہ

    مآخذ:

    • Book : Urdu Adab (Pg. 44)
    • Author : Iqbal Hussain
    • مطبع : Iqbal Hussain Publishers (Jan, Feb. Mar 1996)
    • اشاعت : Jan, Feb. Mar 1996

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY