سبق ایسا پڑھا دیا تو نے

داغؔ دہلوی

سبق ایسا پڑھا دیا تو نے

داغؔ دہلوی

MORE BYداغؔ دہلوی

    سبق ایسا پڑھا دیا تو نے

    دل سے سب کچھ بھلا دیا تو نے

    ہم نکمے ہوئے زمانے کے

    کام ایسا سکھا دیا تو نے

    کچھ تعلق رہا نہ دنیا سے

    شغل ایسا بتا دیا تو نے

    کس خوشی کی خبر سنا کے مجھے

    غم کا پتلا بنا دیا تو نے

    کیا بتاؤں کہ کیا لیا میں نے

    کیا کہوں میں کی کیا دیا تو نے

    بے طلب جو ملا ملا مجھ کو

    بے غرض جو دیا دیا تو نے

    عمر جاوید خضر کو بخشی

    آب حیواں پلا دیا تو نے

    نار نمرود کو کیا گلزار

    دوست کو یوں بچا دیا تو نے

    دست موسیٰ میں فیض بخشش ہے

    نور و لوح و عصا دیا تو نے

    صبح موج نسیم گلشن کو

    نفس جاں فزا دیا تو نے

    شب تیرہ میں شمع روشن کو

    نور خورشید کا دیا تو نے

    نغمہ بلبل کو رنگ و بو گل کو

    دلکش و خوش نما دیا تو نے

    کہیں مشتاق سے حجاب ہوا

    کہیں پردہ اٹھا دیا تو نے

    تھا مرا منہ نہ قابل لبیک

    کعبہ مجھ کو دکھا دیا تو نے

    جس قدر میں نے تجھ سے خواہش کی

    اس سے مجھ کو سوا دیا تو نے

    رہبر خضر و ہادی الیاس

    مجھ کو وہ رہنما دیا تو نے

    مٹ گئے دل سے نقش باطل سب

    نقشہ اپنا جما دیا تو نے

    ہے یہی راہ منزل مقصود

    خوب رستے لگا دیا تو نے

    مجھ گنہ گار کو جو بخش دیا

    تو جہنم کو کیا دیا تو نے

    داغؔ کو کون دینے والا تھا

    جو دیا اے خدا دیا تو نے

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    سمن کلیانپور

    سمن کلیانپور

    مآخذ
    • کتاب : kulliyat-e-dagh (Pg. 338)
    • Author : Nawab Fasihul Mulk Bahadur Hazrat Dagh Dehlvi
    • مطبع : Kitabi Duniya (2008)
    • اشاعت : 2008

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY