سبھی کہیں مرے غم خوار کے علاوہ بھی

احمد فراز

سبھی کہیں مرے غم خوار کے علاوہ بھی

احمد فراز

MORE BYاحمد فراز

    سبھی کہیں مرے غم خوار کے علاوہ بھی

    کوئی تو بات کروں یار کے علاوہ بھی

    بہت سے ایسے ستم گر تھے اب جو یاد نہیں

    کسی حبیب دل آزار کے علاوہ بھی

    یہ کیا کہ تم بھی سر راہ حال پوچھتے ہو

    کبھی ملو ہمیں بازار کے علاوہ بھی

    اجاڑ گھر میں یہ خوشبو کہاں سے آئی ہے

    کوئی تو ہے در و دیوار کے علاوہ بھی

    سو دیکھ کر ترے رخسار و لب یقیں آیا

    کہ پھول کھلتے ہیں گل زار کے علاوہ بھی

    کبھی فرازؔ سے آ کر ملو جو وقت ملے

    یہ شخص خوب ہے اشعار کے علاوہ بھی

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    سبھی کہیں مرے غم خوار کے علاوہ بھی نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY