سچائی سے بالکل عاری ہوتا ہے

معین شاداب

سچائی سے بالکل عاری ہوتا ہے

معین شاداب

MORE BYمعین شاداب

    سچائی سے بالکل عاری ہوتا ہے

    تیرا وعدہ بھی سرکاری ہوتا ہے

    جو اماوس کی رات میں چمکے وہ جگنو

    پورنما کے چاند پہ بھاری ہوتا ہے

    ڈاک ٹکٹ کی بھی کوئی اوقات ہے کیا

    تیری یاد میں آنسو جاری ہوتا ہے

    اس پر ہی پھولوں کی بارش کرتے ہو

    جس کا ہر جملہ چنگاری ہوتا ہے

    محرومی کا جشن منائیں گی آنکھیں

    پھر اعلان شب بیداری ہوتا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY