صدیوں سے راہ تکتی ہوئی گھاٹیوں میں تم (ردیف .. ا)

مجید امجد

صدیوں سے راہ تکتی ہوئی گھاٹیوں میں تم (ردیف .. ا)

مجید امجد

MORE BY مجید امجد

    صدیوں سے راہ تکتی ہوئی گھاٹیوں میں تم

    اک لمحہ آ کے ہنس گئے میں ڈھونڈھتا پھرا

    ان وادیوں میں برف کے چھینٹوں کے ساتھ ساتھ

    ہر سو شرر برس گئے میں ڈھونڈھتا پھرا

    راتیں ترائیوں کی تہوں میں لڑھک گئیں

    دن دلدلوں میں دھنس گئے میں ڈھونڈھتا پھرا

    راہیں دھوئیں سے بھر گئیں میں منتظر رہا

    قرنوں کے رخ جھلس گئے میں ڈھونڈھتا پھرا

    تم پھر نہ آ سکو گے بتانا تو تھا مجھے

    تم دور جا کے بس گئے میں ڈھونڈھتا پھرا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY