صدمہ ہر چند ترے جور سے جاں پر آیا

محمد رفیع سودا

صدمہ ہر چند ترے جور سے جاں پر آیا

محمد رفیع سودا

MORE BYمحمد رفیع سودا

    صدمہ ہر چند ترے جور سے جاں پر آیا

    تس پہ شکوہ نہ کبھی میری زباں پر آیا

    راست کیشوں کی تف آہ سے ڈر اے سرکش

    تیر پھرتا نہیں جس وقت نشاں پر آیا

    موسم شیب میں بے فائدہ ہے لعب شباب

    کب ثمر دیوے ہے جو نخل خزاں پر آیا

    دل پر خوں کو مرے غنچۂ تصویر کی طرح

    لب وا شد نہ کبھی راز نہاں پر آیا

    چشم انجم پہ نہیں ابر سے وہ روز سیاہ

    جو مرے دیدۂ خوں ناب چکاں پر آیا

    رات کو دیکھ کے اے ماہ تجھے غیر کے ساتھ

    طعنہ زن دل کا مرے گل کے کتاں پر آیا

    ہو کے استاد دبستان سخن میں سوداؔ

    شعر کے قاعدہ دانان جہاں پر آیا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY