سفر کا سلسلہ آخر کہاں تمام کروں

ظفر اقبال ظفر

سفر کا سلسلہ آخر کہاں تمام کروں

ظفر اقبال ظفر

MORE BY ظفر اقبال ظفر

    سفر کا سلسلہ آخر کہاں تمام کروں

    کہاں چراغ چلاؤں کہاں قیام کروں

    سبھی کے سر پہ ہے رکھی کلاہ نخوت کی

    قدوں کی بھیڑ میں کس کس کا احترام کروں

    ہیں جتنے مہرے یہاں سارے پٹنے والے ہیں

    کسے میں شہہ کروں اپنا کسے غلام کروں

    عجیب شہر ہے کوئی سخن شناس نہیں

    متاع فکر میں منسوب کس کے نام کروں

    مرا شناسا ہے کوئی نہ ہم زباں ہے کوئی

    دیار غیر میں پھر کس سے میں کلام کروں

    سجاؤں اس کے لئے گھر بچھاؤں پلکیں ظفرؔ

    وہ آ رہا ہے تو کچھ میں بھی اہتمام کروں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY