سفر سے پہلے سرابوں کا سلسلہ رکھ آئے

اسلم محمود

سفر سے پہلے سرابوں کا سلسلہ رکھ آئے

اسلم محمود

MORE BY اسلم محمود

    سفر سے پہلے سرابوں کا سلسلہ رکھ آئے

    ہر ایک موڑ پہ آشوب اک نیا رکھ آئے

    کہاں بھٹکتی پھرے گی اندھیری گلیوں میں

    ہم اک چراغ سر کوچۂ ہوا رکھ آئے

    تمام عمر سفر سے غرض رہی ہم کو

    ہر اختتام پہ ہم ایک ابتدا رکھ آئے

    بھٹک نہ جائے مسافر کوئی ہمارے بعد

    سو راہ شوق میں ہم اپنے نقش پا رکھ آئے

    یہ بے سماعت و بے چہرہ بصارت لوگ

    یہ پتھروں میں کہاں آپ آئینہ رکھ آئے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY