سفینہ رکھتا ہوں درکار اک سمندر ہے

ثروت حسین

سفینہ رکھتا ہوں درکار اک سمندر ہے

ثروت حسین

MORE BYثروت حسین

    سفینہ رکھتا ہوں درکار اک سمندر ہے

    ہوائیں کہتی ہیں اس پار اک سمندر ہے

    میں ایک لہر ہوں اپنے مکان میں اور پھر

    ہجوم کوچہ و بازار اک سمندر ہے

    یہ میرا دل ہے مرا آئینہ ہے شہزادی

    اور آئینے میں گرفتار اک سمندر ہے

    کہاں وہ پیرہن سرخ اور کہاں وہ بدن

    کہ عکس ماہ سے بے دار اک سمندر ہے

    یہ انتہائے مسرت کا شہر ہے ثروتؔ

    یہاں تو ہر در و دیوار اک سمندر ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY