سمندروں کے ادھر سے کوئی صدا آئی

پروین شاکر

سمندروں کے ادھر سے کوئی صدا آئی

پروین شاکر

MORE BY پروین شاکر

    سمندروں کے ادھر سے کوئی صدا آئی

    دلوں کے بند دریچے کھلے ہوا آئی

    سرک گئے تھے جو آنچل وہ پھر سنوارے گئے

    کھلے ہوئے تھے جو سر ان پہ پھر ردا آئی

    اتر رہی ہیں عجب خوشبوئیں رگ و پے میں

    یہ کس کو چھو کے مرے شہر میں صبا آئی

    اسے پکارا تو ہونٹوں پہ کوئی نام نہ تھا

    محبتوں کے سفر میں عجب فضا آئی

    کہیں رہے وہ مگر خیریت کے ساتھ رہے

    اٹھائے ہاتھ تو یاد ایک ہی دعا آئی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites