Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

ثناۓ خواجہ مرے ذہن کوئی مضموں سوچ (ردیف .. ن)

عاصی کرنالی

ثناۓ خواجہ مرے ذہن کوئی مضموں سوچ (ردیف .. ن)

عاصی کرنالی

MORE BYعاصی کرنالی

    ثناۓ خواجہ مرے ذہن کوئی مضموں سوچ

    جناب وادیٔ حیرت میں گم ہوں کیا سوچوں

    زبان مرحلۂ مدح پیش ہے کچھ بول

    مجال حرف زدن ہی نہیں ہے کیا بولوں

    قلم بیاض عقیدت میں کوئی مصرع لکھ

    بجا کہا سر تسلیم خم ہے کیا لکھوں

    شعور ان کے مقام پیمبری کو سمجھ

    میں قید حد میں ہوں وہ بے کراں میں کیا سمجھوں

    خرد بقدر رسائی تو ان کے علم کو جان

    میں نارسائی کا نقطہ ہوں ان کو کیا جانوں

    خیال گنبد خضرا کی سمت اڑ پر کھول

    یہ میں ہوں اور یہ مرے بال و پر ہیں کیا کھولوں

    طلب مدینے چلیں نیکیوں کے دفتر باندھ

    یہاں یہ رخت سفر ہی نہیں ہے کیا باندھوں

    نگاہ دیکھ کہ ہے روبرو دیار جمال

    ہے ذرہ ذرہ یہاں آفتاب کیا دیکھوں

    دل ان سے حرف دعا شیوۂ تمنا مانگ

    بلا سوال وہ دامن بھریں تو کیا مانگوں

    حضور عجز بیاں کو بیاں سمجھ لیجئے

    تہی ہے دامن فن آستاں پہ کیا لاؤں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے