سنگ طفلاں کا ہدف جسم ہمارا نکلا

لطف الرحمن

سنگ طفلاں کا ہدف جسم ہمارا نکلا

لطف الرحمن

MORE BYلطف الرحمن

    سنگ طفلاں کا ہدف جسم ہمارا نکلا

    ہم تو جس شہر گئے شہر تمہارا نکلا

    کس سے امید کریں کوئی علاج دل کی

    چارہ گر بھی تو بہت درد کا مارا نکلا

    جانے مدت پہ تری یاد کدھر سے آئی

    راکھ کے ڈھیر میں پوشیدہ شرارا نکلا

    دل پہ کیا جانے گزر جاتی ہے کیا پچھلے پہر

    اوس ٹپکی تو کہیں صبح کا تارہ نکلا

    جاتے جاتے دیا اس طرح دلاسا اس نے

    بیچ دریا میں کوئی جیسے کنارہ نکلا

    کوئی صحرا کا حوالہ نہ سمندر کی مثال

    جو بھی ڈوبا ہے جہاں دوست ہمارا نکلا

    بوالہوس ضد میں سہی دار و رسن سے گزرا

    اب پشیماں ہے کہ سودا یہ خسارہ نکلا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY