سنسار کی ہر شے کا اتنا ہی فسانہ ہے

ساحر لدھیانوی

سنسار کی ہر شے کا اتنا ہی فسانہ ہے

ساحر لدھیانوی

MORE BY ساحر لدھیانوی

    سنسار کی ہر شے کا اتنا ہی فسانہ ہے

    اک دھند سے آنا ہے اک دھند میں جانا ہے

    یہ راہ کہاں سے ہے یہ راہ کہاں تک ہے

    یہ راز کوئی راہی سمجھا ہے نہ جانا ہے

    اک پل کی پلک پر ہے ٹھہری ہوئی یہ دنیا

    اک پل کے جھپکنے تک ہر کھیل سہانا ہے

    کیا جانے کوئی کس پر کس موڑ پر کیا بیتے

    اس راہ میں اے راہی ہر موڑ بہانا ہے

    ہم لوگ کھلونا ہیں اک ایسے کھلاڑی کا

    جس کو ابھی صدیوں تک یہ کھیل رچانا ہے

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    نامعلوم

    نامعلوم

    مآخذ:

    • کتاب : Kulliyat-e-Sahir Ludhianvi (Pg. 455)
    • Author : SAHIR LUDHIANVI
    • مطبع : Farid Book Depot (Pvt.) Ltd

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY