سر جھکائے سر محشر جو گنہ گار آئے

آسی رام نگری

سر جھکائے سر محشر جو گنہ گار آئے

آسی رام نگری

MORE BYآسی رام نگری

    سر جھکائے سر محشر جو گنہ گار آئے

    اس کے انداز پہ رحمت کو نہ کیوں پیار آئے

    جام و پیمانہ سے مے خانہ سے کیا کام اسے

    ہو کے ساقی کی نگاہوں سے جو سرشار آئے

    دی صدا دل نے ذرا اور بھی دشوار ہو راہ

    راستے جب بھی مرے سامنے ہموار آئے

    زندگی کیوں نہ مرے موت پہ ان کی جو لوگ

    مسکراتے ہوئے زنداں سے سر دار آئے

    میں نے تزئین چمن کے لئے خوں اپنا دیا

    پائے پھول اوروں نے حصے میں مرے خار آئے

    بانکپن اپنی طبیعت کا کبھی کم نہ ہوا

    سامنے اپنے کوئی لاکھ طرح دار آئے

    ایسے جاں بازوں کی بن جائے نہ کیوں موت حیات

    مسکراتے ہوئے آسیؔ جو سر دار آئے

    مأخذ :
    • کتاب : Harf Harf Khowab (Pg. 113)
    • Author : asi ramnagari
    • مطبع : Nasim Pathara Po. Moghalsarai (Varansi) (1992)
    • اشاعت : 1992

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY