سر تا بہ قدم ایک حسیں راز کا عالم

غلام ربانی تاباں

سر تا بہ قدم ایک حسیں راز کا عالم

غلام ربانی تاباں

MORE BYغلام ربانی تاباں

    سر تا بہ قدم ایک حسیں راز کا عالم

    اللہ رے اک فتنہ گر ناز کا عالم

    زلفوں میں وہ برسات کی راتوں کی جوانی

    عارض پہ وہ انوار سحر ساز کا عالم

    عنوان سخن غالبؔ و مومنؔ کا تغزل

    انداز نظر بادۂ شیراز کا عالم

    دزدیدہ نگاہوں میں اک الہام کی دنیا

    نازک سے تبسم میں اک اعجاز کا عالم

    الجھے ہوئے جملوں میں شرارت بھی حیا بھی

    جذبات میں ڈوبا ہوا آواز کا عالم

    اس سادگی حسن میں کس درجہ کشش ہے

    ہر ناز میں اک جذبۂ غماز کا عالم

    اس صید کو کیا کہیے جو خود آئے تہ دام

    دل میں لیے اک حسرت پرواز کا عالم

    یوں تو نہ تساہل نہ تغافل نہ تجاہل

    کچھ اور ہے اس کافر طناز کا عالم

    شوخی میں شرارت میں متانت میں حیا میں

    جو راز کا عالم تھا وہی راز کا عالم

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY