سر سبز موسموں کا نشہ بھی مرے لئے

راجیندر منچندا بانی

سر سبز موسموں کا نشہ بھی مرے لئے

راجیندر منچندا بانی

MORE BYراجیندر منچندا بانی

    دلچسپ معلومات

    شمارہ 114 دسمبر تا مارچ 1980

    سر سبز موسموں کا نشہ بھی مرے لئے

    تلوار کی طرح ہے ہوا بھی مرے لئے

    میرے لئے ہیں منظر و معنی ہزار رنگ

    لفظوں کے درمیاں ہے خلا بھی مرے لئے

    شامل ہوں قافلے میں مگر سر میں دھند ہے

    شاید ہے کوئی راہ جدا بھی مرے لئے

    میں خوش ہوا کہ مژدہ سفر کا مجھے ملا

    پھیلا ہوا ہے دشت‌ سزا بھی مرے لئے

    دیکھوں میں آئنہ تو دھواں پھیل پھیل جائے

    بولوں تو اجنبی ہے صدا بھی مرے لئے

    میرے لئے تمام اذیت تمام قہر

    اور پھول سے لبوں پہ دعا بھی مرے لئے

    بانیؔ عجب طرح سے کھلی خوش مقدری

    برگ شفق بھی برگ حنا بھی مرے لئے

    مأخذ :
    • کتاب : Shabkhoon (Urdu Monthly) (Pg. 871)
    • Author : Shamsur Rahman Faruqi
    • مطبع : Shabkhoon Po. Box No.13, 313 rani Mandi Allahabad (June December 2005áIssue No. 293 To 299âPart II)
    • اشاعت : June December 2005áIssue No. 293 To 299âPart II

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے