سو رہا تھا تو شور برپا تھا

رضی ترمذی

سو رہا تھا تو شور برپا تھا

رضی ترمذی

MORE BY رضی ترمذی

    سو رہا تھا تو شور برپا تھا

    اٹھ کے دیکھا تو میں اکیلا تھا

    خاک پر میرے خواب بکھرے تھے

    اور میں ریزہ ریزہ چنتا تھا

    چار جانب وجود کی دیوار

    اپنی آواز میں ہی سنتا تھا

    عمر بھر بوند بوند کو ترسے

    سامنے گھر کے ایک دریا تھا

    لب دریا کھڑے رہے دونوں

    وہ بھی پیاسا تھا میں بھی پیاسا تھا

    مآخذ:

    • کتاب : Junoon (Pg. 200)
    • Author : Naseem Muqri
    • مطبع : Naseem Muqri (1990)
    • اشاعت : 1990

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY