بنیاد جہاں میں کجی کیوں ہے

شہریار

بنیاد جہاں میں کجی کیوں ہے

شہریار

MORE BYشہریار

    بنیاد جہاں میں کجی کیوں ہے

    ہر شے میں کسی کی کمی کیوں ہے

    کیوں چہرۂ خار شگفتہ ہے

    اور شاخ گلاب جھکی کیوں ہے

    وہ وصل کا دن کیوں چھوٹا تھا

    یہ ہجر کی رات بڑی کیوں ہے

    جس بات سے دل میں ہلچل ہے

    وہ بات لبوں پہ رکی کیوں ہے

    مت دیکھ کہ کون ہے پروانہ

    یہ سوچ کہ شمع جلی کیوں ہے

    نہ تھے خواب تو آنسو ہی ہوتے

    مرا کاسۂ چشم تہی کیوں ہے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق,

    نعمان شوق

    بنیاد جہاں میں کجی کیوں ہے نعمان شوق

    موضوعات

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY