سزا بغیر عدالت سے میں نہیں آیا

سحر انصاری

سزا بغیر عدالت سے میں نہیں آیا

سحر انصاری

MORE BYسحر انصاری

    سزا بغیر عدالت سے میں نہیں آیا

    کہ باز جرم صداقت سے میں نہیں آیا

    فصیل شہر میں پیدا کیا ہے در میں نے

    کسی بھی باب رعایت سے میں نہیں آیا

    اڑا کے لائی ہے شاید خیال کی خوشبو

    تمہاری سمت ضرورت سے میں نہیں آیا

    ترے قریب بھی یاد آ رہے ہیں کار جہاں

    بہت قلق ہے کہ فرصت سے میں نہیں آیا

    گزر گئے یوں ہی دو چار دن اور اس کے بعد

    یہی ہوا کہ ندامت سے میں نہیں آیا

    ہمیشہ ساتھ رہا ہے سحرؔ میرا سورج

    گزر کے وادئ ظلمت سے میں نہیں آیا

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    سحر انصاری

    سحر انصاری

    سحر انصاری

    سحر انصاری

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY