شاعری جھوٹ سہی عشق فسانہ ہی سہی

ثمینہ راجہ

شاعری جھوٹ سہی عشق فسانہ ہی سہی

ثمینہ راجہ

MORE BYثمینہ راجہ

    شاعری جھوٹ سہی عشق فسانہ ہی سہی

    زندہ رہنے کے لیے کوئی بہانہ ہی سہی

    خاک کی لوح پہ لکھا تو گیا نام مرا

    اصل مقصود ترا مجھ کو مٹانا ہی سہی

    خواب عریاں تو اسی طرح تر و تازہ ہے

    ہاں مری نیند کا ملبوس پرانا ہی سہی

    ایک اڑتے ہوئے سیارے کے پیچھے پیچھے

    کوئی امکان کوئی شوق روانہ ہی سہی

    کیا کریں آنکھ اگر اس سے سوا چاہتی ہے

    یہ جہان گزراں آئنہ خانہ ہی سہی

    دل کا فرمان سر دست اٹھا رکھتے ہیں

    خیر کچھ روز کو تکمیل زمانہ ہی سہی

    مأخذ :
    • کتاب : Ghazal Calendar-2015 (Pg. 31.03.2015)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY