شاخ پہ چڑیا گاتی ہے

ناظر صدیقی

شاخ پہ چڑیا گاتی ہے

ناظر صدیقی

MORE BYناظر صدیقی

    شاخ پہ چڑیا گاتی ہے

    جو کچھ ہے لمحاتی ہے

    پلکیں بھیگی رہتی ہیں

    دل کی فضا جذباتی ہے

    بات کروں یا شعر کہوں

    ایک سی خوشبو آتی ہے

    شہر میں ہوں اور تنہا ہوں

    رنگ مرا قصباتی ہے

    فکر ہے مجھ کو اپنی ہی

    غم بھی میرا ذاتی ہے

    حکم نہ دو بے داری کا

    نیند ہی کس کو آتی ہے

    لمس انا پر اتنا ناز

    خوشبو ہے اڑ جاتی ہے

    شمع کی صورت قسمت بھی

    جلتے ہی بجھ جاتی ہے

    قید قفس میں اب ناظرؔ

    روح بہت گھبراتی ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY