شام غم کچھ اس نگاہ ناز کی باتیں کرو

فراق گورکھپوری

شام غم کچھ اس نگاہ ناز کی باتیں کرو

فراق گورکھپوری

MORE BYفراق گورکھپوری

    شام غم کچھ اس نگاہ ناز کی باتیں کرو

    بے خودی بڑھتی چلی ہے راز کی باتیں کرو

    یہ سکوت ناز یہ دل کی رگوں کا ٹوٹنا

    خامشی میں کچھ شکست ساز کی باتیں کرو

    نکہت زلف پریشاں داستان شام غم

    صبح ہونے تک اسی انداز کی باتیں کرو

    ہر رگ دل وجد میں آتی رہے دکھتی رہے

    یوں ہی اس کے جا و بے جا ناز کی باتیں کرو

    جو عدم کی جان ہے جو ہے پیام زندگی

    اس سکوت راز اس آواز کی باتیں کرو

    عشق رسوا ہو چلا بے کیف سا بیزار سا

    آج اس کی نرگس غماز کی باتیں کرو

    نام بھی لینا ہے جس کا اک جہان رنگ و بو

    دوستو اس نو بہار ناز کی باتیں کرو

    کس لیے عذر تغافل کس لیے الزام عشق

    آج چرخ‌ تفرقہ پرواز کی باتیں کرو

    کچھ قفس کی تیلیوں سے چھن رہا ہے نور سا

    کچھ فضا کچھ حسرت پرواز کی باتیں کرو

    جو حیات جاوداں ہے جو ہے مرگ ناگہاں

    آج کچھ اس ناز اس انداز کی باتیں کرو

    عشق بے پروا بھی اب کچھ ناشکیبا ہو چلا

    شوخئ حسن کرشہ ساز کی باتیں کرو

    جس کی فرقت نے پلٹ دی عشق کی کایا فراقؔ

    آج اس عیسیٰ نفس دم ساز کی باتیں کرو

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    ونود سہگل

    ونود سہگل

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    شام غم کچھ اس نگاہ ناز کی باتیں کرو نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY