شام کہتی ہے کوئی بات جدا سی لکھوں

فرحت شہزاد

شام کہتی ہے کوئی بات جدا سی لکھوں

فرحت شہزاد

MORE BYفرحت شہزاد

    شام کہتی ہے کوئی بات جدا سی لکھوں

    دل کا اصرار ہے پھر اس کی اداسی لکھوں

    آج زخموں کو محبت کی عطا کے بدلے

    تحفہ و تمغۂ احباب شناسی لکھوں

    ساتھ ہو تم بھی مرے ساتھ ہے تنہائی بھی

    کون سے دل سے کسے وجہ اداسی لکھوں

    جس نے دل مانگا نہیں چھین لیا ہے مجھ سے

    آپ میں آؤں تو وہ آنکھ حیا سی لکھوں

    مجھ پہ ہو جائے تری چشم کرم گر پل بھر

    پھر میں یہ دونوں جہاں ''بات ذرا سی'' لکھوں

    دوڑتی ہے جو مرے خون میں تیری حسرت

    دیکھ آئینہ اسے خون کی پیاسی لکھوں

    تجھ سے کیوں دور ہے مجبور ہے شہزادؔ ترا

    پڑھ سکے تو تو میں سچائی ذرا سی لکھوں

    مأخذ :
    • کتاب : urdu gazal ka magribi daricha (Pg. 128)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے