شب فراق کچھ ایسا خیال یار رہا

ہجر ناظم علی خان

شب فراق کچھ ایسا خیال یار رہا

ہجر ناظم علی خان

MORE BYہجر ناظم علی خان

    شب فراق کچھ ایسا خیال یار رہا

    کہ رات بھر دل غم دیدہ بے قرار رہا

    کہے گی حشر کے دن اس کی رحمت بے حد

    کہ بے گناہ سے اچھا گناہگار رہا

    ترا خیال بھی کس درجہ شوخ ہے اے شوخ

    کہ جتنی دیر رہا دل میں بے قرار رہا

    شراب عشق فقط اک ذرا سی چکھی تھی

    بڑا سرور گھٹا مدتوں خمار رہا

    انہیں غرض انہیں مطلب وہ حال کیوں پوچھیں

    بلا سے ان کی اگر کوئی بے قرار رہا

    تمہیں کبھی نہ کبھی مر کے بھی دکھا دوں گا

    جو زندگی نے وفا کی جو برقرار رہا

    ادائیں دیکھ چکے آئینے میں آپ اپنی

    بتائیے تو سہی دل پر اختیار رہا

    شب وصال بڑے لطف سے کٹی اے ہجرؔ

    تمام رات کسی کے گلے کا ہار رہا

    RECITATIONS

    فصیح اکمل

    فصیح اکمل

    فصیح اکمل

    شب فراق کچھ ایسا خیال یار رہا فصیح اکمل

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY