شب و روز جیسے ٹھہر گئے کوئی ناز ہے نہ نیاز ہے

شاذ تمکنت

شب و روز جیسے ٹھہر گئے کوئی ناز ہے نہ نیاز ہے

شاذ تمکنت

MORE BYشاذ تمکنت

    شب و روز جیسے ٹھہر گئے کوئی ناز ہے نہ نیاز ہے

    ترے ہجر میں یہ پتا چلا مری عمر کتنی دراز ہے

    یہ جہاں ہے محبس بے اماں کوئی سانس لے تو بھلا کہاں

    ترا حسن آ گیا درمیاں یہی زندگی کا جواز ہے

    ہو بدن کے لوچ کا کیا بیاں کسی نے کی موج ہے پرفشاں

    کوئی لے ہے زیر قبا نہاں کوئی شے بہ صورت راز ہے

    ترے غم سے دل پھر امیر ہو کوئی چاند نکلے سفیر ہو

    شب دشت ہو ہے یہ زندگی نہ نشیب ہے نہ فراز ہے

    چلے طائر اڑ کے پس شفق ہے اداس اداس رخ افق

    کہ بیاض شام کا ہر ورق تری داستان دراز ہے

    اگر احتیاط خطاب ہو لب سنگ کھل کے گلاب ہو

    تو کسی صنم کو صدا تو دے در بت کدہ ابھی باز ہے

    وہی روپ ساغر جم میں بھی وہی عکس دیدۂ نم میں بھی

    مرے واسطے تو حرم میں بھی وہی شاذؔ روئے مجاز ہے

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    شاذ تمکنت

    شاذ تمکنت

    مأخذ :
    • کتاب : Kulliyat-e-Shaz Tamkanat (Pg. 318)
    • Author : Shaz Tamkanat
    • مطبع : Educational Publishing House (2004)
    • اشاعت : 2004

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY