شہر میں اک قتل کی افواہ روشن کیا ہوئی (ردیف .. ر)

شارق عدیل

شہر میں اک قتل کی افواہ روشن کیا ہوئی (ردیف .. ر)

شارق عدیل

MORE BYشارق عدیل

    شہر میں اک قتل کی افواہ روشن کیا ہوئی

    اک طرف تکبیر تھی اور اک طرف جے کی پکار

    خوف و دہشت کے اثر سے چند بپھرے نوجواں

    زندگی کو کر رہے تھے ہر طرف کھل کر شکار

    خون سے لتھڑی ہوئی لاشیں اٹھائے گود میں

    آسماں کی سمت مائیں دیکھتی تھیں بار بار

    جبر و استحصال کے اس آتشیں سیلاب میں

    بہہ گئے انسانیت کے لہلہاتے برگ و بار

    پھر ہوا یوں کرفیو کی خامشی کے درمیاں

    درد میں ڈوبی ہوئی آئی قلندر کی پکار

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے