شریک خلوت خوں بار تھوڑی ہوتا ہے

خالد معین

شریک خلوت خوں بار تھوڑی ہوتا ہے

خالد معین

MORE BYخالد معین

    شریک خلوت خوں بار تھوڑی ہوتا ہے

    یہ شہر غم کا، نگہ دار تھوڑی ہوتا ہے

    شکست و فتح کے اسباب طے شدہ تو نہیں

    جو ایک بار ہو، ہر بار تھوڑی ہوتا ہے

    ہے ایک وقت مقرر، وگرنہ دنیا میں

    کوئی زوال پہ تیار تھوڑی ہوتا ہے

    فریب دعویٰ گزاری ہے، مسئلہ کچھ اور

    سبھی کو عشق کا آزار تھوڑی ہوتا ہے

    لہو کی تال پہ آغاز رقص کرتے ہوئے

    ادھر ادھر سے سروکار تھوڑی ہوتا ہے

    الٹنا چاہے جو کار منافقت کا نقاب

    یہ شہر! اس کا طرف دار تھوڑی ہوتا ہے

    لکیریں کھینچتے رہنے سے بن گئی تصویر

    کوئی بھی کام ہو، بے کار تھوڑی ہوتا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY