شوق دیتا ہے مجھے پیغام عشق

وحشتؔ رضا علی کلکتوی

شوق دیتا ہے مجھے پیغام عشق

وحشتؔ رضا علی کلکتوی

MORE BYوحشتؔ رضا علی کلکتوی

    شوق دیتا ہے مجھے پیغام عشق

    ہاتھ میں لبریز لے کر جام عشق

    آپ ہوں ذوق اسیری سے خراب

    کوئی لے جائے مجھے تا دام عشق

    اشتیاق سجدہ سے بیتاب ہوں

    اے حریم کعبۂ اسلام عشق

    قیس و وامق سے کہاں اب اہل دل

    تھا انہیں لوگوں سے روشن نام عشق

    نعش پر فرہاد کے شیریں گئی

    وہ ستم پروردۂ آلام عشق

    اور یوں کرنے لگی رو کر خطاب

    اے وفا کی جان اے ناکام عشق

    تجھ سے رونق آشنا ہے صبح شوق

    تجھ سے زینت آفریں ہے شام عشق

    جان دے کر تو تو چھوٹا رنج سے

    رہ گئی میں ہی بلا آشام عشق

    تیرا مرنا عشق کا آغاز تھا

    موت پر ہوگا مرے انجام عشق

    وحشتؔ وحشی کہ تھا سب سے الگ

    ہو گیا کیا بے تکلف رام عشق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY