شیشہ صفت تھے آپ اور شیشہ صفت تھے ہم

رینو نیر

شیشہ صفت تھے آپ اور شیشہ صفت تھے ہم

رینو نیر

MORE BYرینو نیر

    شیشہ صفت تھے آپ اور شیشہ صفت تھے ہم

    بکھرے ہوئے سے آپ ہیں بکھرے ہوئے سے ہم

    اس نے تھما دی ہاتھ میں اک بانسری ہمیں

    پتھر اٹھا کے ہاتھ میں دینے لگے تھے ہم

    موجود ہے تری طرح وہ پاس بھی نہیں

    کیسے کہیں یہ بات اب پاگل ہوا سے ہم

    ہر شخص تھا تری طرف تیری ہی بزم تھی

    کس کو سناتے پھر ترے قصے جفا کے ہم

    تیری کسی مراد کی خاطر مرے رقیب

    گر جائیں آسمان سے ہیں وہ ستارے ہم

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY