شکست زندگی ویسے بھی موت ہی ہے نا

افضل خان

شکست زندگی ویسے بھی موت ہی ہے نا

افضل خان

MORE BYافضل خان

    شکست زندگی ویسے بھی موت ہی ہے نا

    تو سچ بتا یہ ملاقات آخری ہے نا

    کہا نہیں تھا مرا جسم اور بھر یا رب

    سو اب یہ خاک ترے پاس بچ گئی ہے نا

    تو میرے حال سے انجان کب ہے اے دنیا

    جو بات کہہ نہیں پایا سمجھ رہی ہے نا

    اسی لیے ہمیں احساس جرم ہے شاید

    ابھی ہماری محبت نئی نئی ہے نا

    یہ کور چشم اجالوں سے عشق کرتے ہیں

    جو گھر جلا کے بھی کہتے ہیں روشنی ہے نا

    میں خود بھی یار تجھے بھولنے کے حق میں ہوں

    مگر جو بیچ میں کم بخت شاعری ہے نا

    میں جان بوجھ کے آیا تھا تیغ اور ترے بیچ

    میاں نبھانی تو پڑتی ہے دوستی ہے نا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY