شکوہ بن کر فغاں سے اٹھتا ہے

محفوظ اثر

شکوہ بن کر فغاں سے اٹھتا ہے

محفوظ اثر

MORE BYمحفوظ اثر

    شکوہ بن کر فغاں سے اٹھتا ہے

    شعلۂ غم زباں سے اٹھتا ہے

    پھر جلا آشیاں کوئی شاید

    پھر دھواں گلستاں سے اٹھتا ہے

    ٹوٹ جاتا ہے سلسلہ لے کا

    جب کوئی درمیاں سے اٹھتا ہے

    ٹھہرے پانی میں کچھ نہیں ہوتا

    شور آب رواں سے اٹھتا ہے

    سر میں سودائے بندگی ہے اثرؔ

    کون اس آستاں سے اٹھتا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY