شہرت طرز فغاں عام ہوئی جاتی ہے

فگار اناوی

شہرت طرز فغاں عام ہوئی جاتی ہے

فگار اناوی

MORE BY فگار اناوی

    شہرت طرز فغاں عام ہوئی جاتی ہے

    کوشش ضبط بھی ناکام ہوئی جاتی ہے

    مست ہیں اور طلب جام ہوئی جاتی ہے

    بے خودی ہوش کا پیغام ہوئی جاتی ہے

    مسکراتا ہے حسیں پردۂ گلشن میں کوئی

    اور کلی مفت میں بدنام ہوئی جاتی ہے

    قید میں بھی ہے اسیروں کا وہی جوش عمل

    مشق پرواز تہ دام ہوئی جاتی ہے

    توڑ کر دل نگہ مست نہ پھیر اے ساقی

    بزم کی بزم ہی بے جام ہوئی جاتی ہے

    لب جو کھولے تو گلستاں میں کلی کون کہے

    چپ بھی رہتی ہے تو بدنام ہوئی جاتی ہے

    مجھ کو لے جائے گی منزل پہ مری صبح یقیں

    لاکھ رستے میں مجھے شام ہوئی جاتی ہے

    ناوک اندازیٔ جاناں کا اثر ہے کہ فگارؔ

    ایک دنیا مری ہم نام ہوئی جاتی ہے

    مآخذ:

    • کتاب : Harf-o-nava (Pg. 107)
    • Author : umesh bahadur sirivasto figaar unnavi
    • مطبع : Figaar Unnavi (2001)
    • اشاعت : 2001

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY