شوخ کہتا ہے بے حیا جانا

مومن خاں مومن

شوخ کہتا ہے بے حیا جانا

مومن خاں مومن

MORE BYمومن خاں مومن

    شوخ کہتا ہے بے حیا جانا

    دیکھو دشمن نے تم کو کیا جانا

    شعلۂ دل کو ناز تابش ہے

    اپنا جلوہ ذرا دکھا جانا

    شوق نے دورباش اعدا کو

    اس کی محفل میں مرحبا جانا

    اس کے اٹھتے ہی ہم جہاں سے اٹھے

    کیا قیامت ہے دل کا آ جانا

    گھر میں خود رفتگی سے دھوم مچی

    کیونکے ہو اس تلک مرا جانا

    پوچھنا حال یار ہے منظور

    میں نے ناصح کا مدعا جانا

    مے نہ اتری گلے سے جو اس بن

    مجھ کو یاروں نے پارسا جانا

    شکوہ کرتا ہے بے نیازی کا

    تو نے مومنؔ بتوں کو کیا جانا

    RECITATIONS

    فصیح اکمل

    فصیح اکمل

    فصیح اکمل

    شوخ کہتا ہے بے حیا جانا فصیح اکمل

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY