سینہ ہے ایک یاس کا صحرا لیے ہوئے

رابعہ پنہاں

سینہ ہے ایک یاس کا صحرا لیے ہوئے

رابعہ پنہاں

MORE BYرابعہ پنہاں

    سینہ ہے ایک یاس کا صحرا لیے ہوئے

    دل رنگ گلستان تمنا لئے ہوئے

    ہے آہ درد و سوز کی دنیا لیے ہوئے

    طوفان اشک خون ہے گریہ لئے ہوئے

    اک کشتۂ فراق کی تربت پہ نوحہ گر

    داغ جگر میں شمع تمنا لئے ہوئے

    میں اک طرف ہوں شکل خزاں پائمال یاس

    اک سمت وہ بہار کا جلوہ لئے ہوئے

    جانا سنبھل کے اے دل بیتاب بزم میں

    ہے چشم ناز محشر غم زا لئے ہوئے

    سوزاں نہ یہ چمن ہو مرے نور آہ سے

    او گلشن جمال کا جلوہ لئے ہوئے

    مجنوں سے تو حقیقت صحرائے نجد پوچھ

    ہے ذرہ ذرہ جلوۂ لیلیٰ لئے ہوئے

    عشق جنوں نواز رہا بزم ناز میں

    اک اضطراب و شوق کی دنیا لئے ہوئے

    میری تو ہر نگاہ ہے وقف عبودیت

    وہ ہر ادا میں حسن کلیسا لئے ہوئے

    مرہم سے بے نیاز ہے پنہاںؔ یہ زخم دل

    کیا کیا فسوں ہے چشم دل آرا لئے ہوئے

    مأخذ :
    • کتاب : Pathan Shayraat ka Tazkira (Pg. 100)
    • Author : Khan Mohammad Atif
    • مطبع : Khan Mohammad Atif (1983)
    • اشاعت : 1983

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے