سمٹ سمٹ سی گئی تھی زمیں کدھر جاتا

شاذ تمکنت

سمٹ سمٹ سی گئی تھی زمیں کدھر جاتا

شاذ تمکنت

MORE BYشاذ تمکنت

    سمٹ سمٹ سی گئی تھی زمیں کدھر جاتا

    میں اس کو بھولتا جاتا ہوں ورنہ مر جاتا

    میں اپنی راکھ کریدوں تو تیری یاد آئے

    نہ آئی تیری صدا ورنہ میں بکھر جاتا

    تری خوشی نے مرا حوصلہ نہیں دیکھا

    ارے میں اپنی محبت سے بھی مکر جاتا

    کل اس کے ساتھ ہی سب راستے روانہ ہوئے

    میں آج گھر سے نکلتا تو کس کے گھر جاتا

    میں کب سے ہاتھ میں کاسہ لیے کھڑا ہوں شاذؔ

    اگر یہ زخم ہی ہوتا تو کب کا بھر جاتا

    مأخذ :
    • کتاب : Kulliyat-e- Shaz Tamkanat (Pg. 381)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY