ستاروں کے پیام آئے بہاروں کے سلام آئے

علی سردار جعفری

ستاروں کے پیام آئے بہاروں کے سلام آئے

علی سردار جعفری

MORE BYعلی سردار جعفری

    ستاروں کے پیام آئے بہاروں کے سلام آئے

    ہزاروں نامہ ہائے شوق اہل دل کے کام آئے

    نہ جانے کتنی نظریں اس دل وحشی پہ پڑتی ہیں

    ہر اک کو فکر ہے اس کی یہ شاہیں زیر دام آئے

    اسی امید میں بیتابی جاں بڑھتی جاتی ہے

    سکون دل جہاں ممکن ہو شاید وہ مقام آئے

    ہماری تشنگی بجھتی نہیں شبنم کے قطروں سے

    جسے ساقی گری کی شرم ہو آتش بہ جام آئے

    کوئی شاید ہمارے داغ دل کی طرح روشن ہو

    ہزاروں آفتاب اس شوق میں بالائے بام آئے

    انہیں راہوں میں شیخ و محتسب حائل رہے اکثر

    انہیں راہوں میں حوران بہشتی کے خیام آئے

    نگاہیں منتظر ہیں ایک خورشید تمنا کی

    ابھی تک جتنے مہر و ماہ آئے نا تمام آئے

    یہ عالم لذت تخلیق کا ہے رقص لافانی

    تصور خانۂ حیرت میں لاکھوں صبح و شام آئے

    کوئی سردارؔ کب تھا اس سے پہلے تیری محفل میں

    بہت اہل سخن اٹھے بہت اہل کلام آئے

    مأخذ :
    • کتاب : Kulliyat-e-Ali Sardar Jafri Vol.II (Pg. 434)
    • Author : Ali Ahmad Fatmi
    • مطبع : Qaumi Council Baray-e-farog Urdu Zaban, New Delhi (2005)
    • اشاعت : 2005

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے