ستم کب ان پہ ڈھایا ہے کسی نے

جاوید صدیقی اعظمی

ستم کب ان پہ ڈھایا ہے کسی نے

جاوید صدیقی اعظمی

MORE BYجاوید صدیقی اعظمی

    ستم کب ان پہ ڈھایا ہے کسی نے

    بس آئینہ دکھایا ہے کسی نے

    فلک سے خوں کی بارش کیوں نہ ہوتی

    زمیں کا دل دکھایا ہے کسی نے

    مری آنکھیں چھلکنے لگ گئیں ہیں

    تعلق کیا نبھایا ہے کسی نے

    سیاست کھیل ہے جادوگری کا

    تماشائی بنایا ہے کسی نے

    بہت نازک بدن ہے شاعری کا

    کہ جیسے گل اٹھایا ہے کسی نے

    بڑی راحت ملی جاویدؔ دل کو

    گلے سے جب لگایا ہے کسی نے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY