سیاہ خانۂ امید رائیگاں سے نکل

راجیندر منچندا بانی

سیاہ خانۂ امید رائیگاں سے نکل

راجیندر منچندا بانی

MORE BYراجیندر منچندا بانی

    سیاہ خانۂ امید رائیگاں سے نکل

    کھلی فضا میں ذرا آ غبار جاں سے نکل

    عجیب بھیڑ یہاں جمع ہے یہاں سے نکل

    کہیں بھی چل مگر اس شہر بے اماں سے نکل

    اک اور راہ ادھر دیکھ جا رہی ہے وہیں

    یہ لوگ آتے رہیں گے تو درمیاں سے نکل

    ذرا بڑھا تو سہی واقعات کو آگے

    طلسم کارئ آغاز داستاں سے نکل

    تو کوئی غم ہے تو دل میں جگہ بنا اپنی

    تو اک صدا ہے تو احساس کی کماں سے نکل

    یہیں کہیں ترا دشمن چھپا ہے اے بانیؔ

    کوئی بہانہ بنا بزم دوستاں سے نکل

    مأخذ :
    • کتاب : Kulliyat-e-bani (Pg. 43)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے