سوفار تصور ہے ستاروں کا ہدف ہے

اظہار اثر

سوفار تصور ہے ستاروں کا ہدف ہے

اظہار اثر

MORE BYاظہار اثر

    سوفار تصور ہے ستاروں کا ہدف ہے

    ہے فاتح افلاک یہ انساں کا شرف ہے

    اک لمحۂ تخلیق کی آہٹ ہے کہیں پر

    موتی کوئی نکلے گا ابھی بند صدف ہے

    تو بھی تو ہٹا جسم کے سورج سے اندھیرے

    یہ مہکی ہوئی رات بھی مہتاب بکف ہے

    جس لفظ پہ سر اپنے کٹائے شہدا نے

    تاریخ سیاست سے وہی لفظ حذف ہے

    ہر سمت فرشتے ہیں کہ ترشے ہوئے پتھر

    اس بھیڑ میں انساں کے لیے بھی کوئی صف ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY