صبح دم روتی جو تیری بزم سے جاتی ہے شمع

امداد امام اثرؔ

صبح دم روتی جو تیری بزم سے جاتی ہے شمع

امداد امام اثرؔ

MORE BYامداد امام اثرؔ

    صبح دم روتی جو تیری بزم سے جاتی ہے شمع

    صاف میرے سوز غم کا رنگ دکھلاتی ہے شمع

    جس طرح کالے کے من کے روبرو گل ہو چراغ

    دیکھ کر تعویذ زلف یار بجھ جاتی ہے شمع

    صرف پروانہ ادب سے دم بخود رہتا نہیں

    تیرے رعب حسن سے محفل میں تھراتی ہے شمع

    گھیر لیتے ہیں تجھے پروانے اس کو چھوڑ کر

    جس میں تو ہو کب فروغ اس بزم میں پاتی ہے شمع

    کاربند عدل ہوتے ہیں جو ہیں روشن دماغ

    بزم میں ہر سمت یکساں نور پہنچاتی ہے شمع

    پردۂ فانوس سے باہر نہیں رکھتی قدم

    روبرو تیرے رخ روشن کے شرماتی ہے شمع

    جائے گریہ صحبت اہل تماشا ہے اثرؔ

    ہے بجا روتی ہوئی جو بزم میں آتی ہے شمع

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے