صبح کے شور میں ناموں کی فراوانی میں

ثروت حسین

صبح کے شور میں ناموں کی فراوانی میں

ثروت حسین

MORE BYثروت حسین

    صبح کے شور میں ناموں کی فراوانی میں

    عشق کرتا ہوں اسی بے سر و سامانی میں

    سورما جس کے کناروں سے پلٹ آتے ہیں

    میں نے کشتی کو اتارا ہے اسی پانی میں

    صوفیہ، تم سے ملاقات کروں گا اک روز

    کسی سیارے کی جلتی ہوئی عریانی میں

    میں نے انگور کی بیلوں میں تجھے چوم لیا

    کر دیا اور اضافہ تری حیرانی میں

    کتنا پر شور ہے جسموں کا اندھیرا ثروتؔ

    گفتگو ختم ہوئی جاتی ہے جولانی میں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY