aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

سکوں پایا طبیعت نے نہ دل کو ہی قرار آیا

جنبش خیرآبادی

سکوں پایا طبیعت نے نہ دل کو ہی قرار آیا

جنبش خیرآبادی

MORE BYجنبش خیرآبادی

    سکوں پایا طبیعت نے نہ دل کو ہی قرار آیا

    جو آنسو آنکھ میں آیا بڑا بے اعتبار آیا

    کسی کا بانکپن سارے زمانے میں پکار آیا

    چمک آنکھوں میں آئی نوک مژگاں پر نکھار آیا

    مقدر اپنا اپنا ہے گل‌ و شبنم کی وادی میں

    کوئی ہنستا ہوا آیا تو کوئی اشک بار آیا

    مجھے کیا واسطہ ہے آپ کے حسن تخیل سے

    مری آنکھوں پہ جب آیا مرے خوابوں کو پیار آیا

    تری بے التفاتی کو خدا رکھے کہ اے ساقی

    شراب غم سے ہم تشنہ لبوں پر بھی خمار آیا

    ہوئے ہیں رنگ و بو دست و گریباں ایسے گلشن میں

    نسیم صبح کا دامن بھی ہو کر تار تار آیا

    دھواں جو بے کسوں کی آہ کا اٹھا تو اے جنبشؔ

    چمن والے پکار اٹھے کہ وہ ابر بہار آیا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے