سلگتی یاد سے خوں اٹ نہ جائے

حنیف ترین

سلگتی یاد سے خوں اٹ نہ جائے

حنیف ترین

MORE BYحنیف ترین

    سلگتی یاد سے خوں اٹ نہ جائے

    دھوئیں سے دل کی کھائی پٹ نہ جائے

    نئی فکروں سے بھیجا پھٹ نہ جائے

    جو غم میرا ہے سب میں بٹ نہ جائے

    سرابوں کو جلائے رکھ کہ جب تک

    یہ چیخیں مارتی شب ہٹ نہ جائے

    مسلسل بارش افتاد سہہ کر

    سڑک پیمائشوں کی کٹ نہ جائے

    بدن کا گھر ہے دیمک پھیلنے سے

    یہ ڈر ہے دل کا روزن چٹ نہ جائے

    صدائے رنگ چھو کر پانیوں کا

    گھٹا تخلیقیت کی چھٹ نہ جائے

    حنیفؔ آیا ہے تم سے چاند ملنے

    درازی دیکھو شب کی گھٹ نہ جائے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY