سنا ہے اس طرف کا رخ کریں گے

خالد عبادی

سنا ہے اس طرف کا رخ کریں گے

خالد عبادی

MORE BYخالد عبادی

    سنا ہے اس طرف کا رخ کریں گے

    ترے دشمن مری جانب بڑھیں گے

    کسی سے کچھ نہ پوچھا کچھ نہ جانا

    یہ دھبے خون کے کیسے دھلیں گے

    بہت ہیں چار دن یہ زندگی کے

    کبھی رن میں کبھی گھر میں رہیں گے

    مسیحاؤں کو اب زحمت نہ ہوگی

    ہم ان کے آتے آتے مر چکیں گے

    کہاں جاتے ہیں گھبرائے ہوئے لوگ

    کہ صحرا میں تو دیوانے رہیں گے

    ابھی مرنے کی جلدی ہے عبادیؔ

    اگر زندہ رہے تو پھر ملیں گے

    مأخذ :
    • کتاب : khush ahjaar (Pg. 99)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY