سورج چڑھا تو دل کو عجب وہم سا ہوا

پریم کمار نظر

سورج چڑھا تو دل کو عجب وہم سا ہوا

پریم کمار نظر

MORE BYپریم کمار نظر

    سورج چڑھا تو دل کو عجب وہم سا ہوا

    دشمن جو شب کو مارا تھا وہ اٹھ کھڑا ہوا

    بکھری ہوئی ہے ریت ندامت کی ذہن میں

    اترا ہے جب سے جسم کا دریا چڑھا ہوا

    زلفوں کی آبشار سرہانے پہ گر پڑی

    کھولا جو اس نے رات کو جوڑا بندھا ہوا

    نکلا کرو پہن کے نہ یوں مختصر لباس

    پڑھ لے گا کوئی لوح بدن پر لکھا ہوا

    اک شخص جس سے میرا تعارف نہیں مگر

    گزرا ہے بار بار مجھے دیکھتا ہوا

    مأخذ :
    • کتاب : sheerazah (Pg. 117)
    • Author : makhmoor saeedi,Parem Gopal Mittal
    • مطبع : P -K Publication 3072 Partap stareet gola Market -Daryaganj delhi-6 (1973)
    • اشاعت : 1973

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY