سورج چھپا اک اک گل منظر بکھر گیا

جعفر شیرازی

سورج چھپا اک اک گل منظر بکھر گیا

جعفر شیرازی

MORE BYجعفر شیرازی

    سورج چھپا اک اک گل منظر بکھر گیا

    شعلہ سا کوئی دل میں اتر کر بکھر گیا

    تھا چاندنی کا جسم کہ شیشے کا تھا بدن

    آئی ہوا تو گر کے زمیں پر بکھر گیا

    کل ہنس کے ریگ دشت سے کہتی تھی زندگی

    میں نے چھوا ہی تھا کہ وہ پتھر بکھر گیا

    ندی پہ ایک نرم کرن نے رکھا جو پاؤں

    چاروں طرف صدا کا سمندر بکھر گیا

    جعفرؔ ہمارا دل بھی ہے وہ آئنہ کہ بس

    کھائی ذرا نگاہ کی ٹھوکر بکھر گیا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY