تا بہ کے منزل بہ منزل ہم مسافر بھاگتے

رؤف خیر

تا بہ کے منزل بہ منزل ہم مسافر بھاگتے

رؤف خیر

MORE BYرؤف خیر

    تا بہ کے منزل بہ منزل ہم مسافر بھاگتے

    آنکھ اب ٹھہری ہوئی ہے اور مناظر بھاگتے

    اے حریف ہر قدم شہ مات سے بچنے کی سوچ

    اس بساط خاک سے کیا ہم سے شاطر بھاگتے

    ہم تو آئے ہیں یہاں مٹنے مٹانے کے لئے

    اس زمین کربلا سے کس کی خاطر بھاگتے

    بس میں آ جانے کا جذبہ بس میں کرنے کی ہوس

    خاک‌ و باد و آب و آتش بھی ہیں قاصر بھاگتے

    سر کہیں پاؤں کہیں آنکھیں کہیں چہرہ کہیں

    اس ہوس میں کھو گئی پہچان آخر بھاگتے

    خیرؔ شب خوں مار کر چھپ جانے والے ہم نہیں

    معرکہ سر کرنے نکلے ہیں تو کیا پھر بھاگتے

    کھود لیتے ہیں کنواں شہداب پا لیتے ہیں خیرؔ

    اس زمین سخت سے کیا ہم سے شاعر بھاگتے

    مآخذ :
    • کتاب : siip (Magzin) (Pg. 256)
    • Author : Nasiim Durraani
    • مطبع : Fikr-e-Nau (39 (Quarterly) )
    • اشاعت : 39 (Quarterly)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY